پاکستانی ریسٹورنٹ نادار لوگوں کو مفت کھانا فراہم کرنے لگا

کینیڈین نژاد پاکستانی مسٹر کمال کے کارِ خیر کو بھرپور تحسین سے نوازا جا رہا ہے

اگرآپ دُبئی میں مقیم ہیں اور ملازمت کے نہ ہونے کے باعث پیسوں کی کمی کا شکار ہیں تو حوصلہ نہ ہاریئے۔ ایک ریسٹورنٹ ایسا ہے جو آپ کو بلامعاوضہ کھانا کھلانے کے لیے تیار ہے۔ آج سے تقریباً ایک سال پہلے کینیڈین نژاد پاکستانی ملک نے ’دی کباب شاپ‘ کے نام سے دیسی کھانوں کے اس ریسٹورنٹ کا آغاز کیا جو اپنے چٹ پٹے اور مصالحے دار کھانوں کے باعث بہت کامیابی سے چل رہا ہے۔تاہم کافی دِنوں قبل اس ریسٹورنٹ کی جانب سے ایک ایسا فلاحی اقدام شروع کیا گیا جس نے تمام لوگوں کے دِل جیت لیے ہیں۔ اس ریسٹورنٹ کے باہری شیشے پر ایک کاغذ پر تحریر کیاگیا ہے ’’اگر آپ بے روزگار ہیں اور ملازمت کی تلاش میں ہیں۔ تو تشریف لائیں اور مفت کھانا کھائیں۔

جب آپ برسرروزگار ہو جائیں، تو آپ اپنی مرضی سے بے شک یہاں آ کر پیسے ادا کر سکتے ہیں۔

‘‘ اس ریسٹورنٹ کے باعث حالات کے ستائے لوگوں کی پیٹ پُوجا کا بہترین بندوبست ہو گیا ہے۔ آپ اس ریسٹورنٹ میں تشریف لائیں۔ آپ سے کوئی سوال نہیں پُوچھا جائے گا، کوئی شناختی دستاویزات طلب نہیں کی جائیں گی، اور نہ ہی کوئی کاغذی کارروائی ہو گی۔ بس ریسٹورنٹ کے کاؤنٹر کی کھڑکی سے کھانا طلب کریں، وہیں بیٹھ کر کھائیں اور چلے جائیں۔ جب ریسٹورنٹ کے مالک مسٹر کمال سے پُوچھا گیا کہ اس کارِ خیر کے پیچھے کیا جذبہ کارفرما ہے؟ تو انہوں نے بتایا کہ اُن کے پاس ایک گاہک باقاعدگی سے کھانا کھانے آیا کرتا تھا۔پھر اچانک اُس نے ریسٹورنٹ آنا چھوڑ دیا۔ ایک دفعہ اُس سے باہر کہیں ملاقات ہو گئی۔ میں نے پُوچھا کہ اب آپ کھانا کھانے کیوں نہیں آتے تو اُس نے بتایا کہ وہ ملازمت سے محروم ہو گیا ہے، پیسوں کی کمی کی وجہ سے وہ میرے ریسٹورنٹ نہیں آ رہا تھا۔ جس کے بعد میرے دِل میں اس احساس نے جنم لیا کہ بے روزگار افراد کو کھانے کے لالے پڑ جاتے ہیں۔ ایسے لوگوں کو کھانے کی مفت سہولت فراہم کرنی چاہیے۔ اس کارِ خیر سے دُوسرے لوگوں کے اندر بھی انسانوں کے لیے کچھ کر گزرنے کا جذبہ جنم لے گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.